بلیک ستمبر ضیاء الحق کے ظلم کا ایک سیاہ باب

See on Scoop.itparachinarvoice

Shafiq Ahmed‘s insight:

بلیک ستمبر ضیاء الحق کے ظلم کا ایک سیاہ باب

posted by Faisal Mahmood | August 17, 2013 | In Featured, Original Articles, Urdu Articles

آج 17 اگست ہے. آج کے دن پاکستان کو ایک آمر سے نجات ملی تھی. یہ آمر نہ صرف پاکستان میں مذہبی انتہا پسندی کا بانی ہے بلکہ اس نے پاکستان کو امریکا کی گود میں ڈال دیا تھا.وہ لوگ جو ضیاء الحق کو مرد مومن اور مرد حق کے القابات سے نوازتے ہیں ان کو شاید یہ بات معلوم نہیں کہ ضیاء الحق کے ہاتھہ معصوم فلسطینیوں کے خون سے رنگے ھوۓ ہیں. ضیاء الحق نے اردن میں 25000 فلسطینیوں کا قتل عام کیا تھا. تاریخ آج بھی اس قتل عام کو بلیک ستمبر کے نام سےجانتی ہے
بلیک ستمبر کے دوران پاکستانی آرمی کے ایک ٹریننگ کمیشن (جس کی قیادت ضیاء الحق کر رہا تھا) نے 25000 فلسطینیوں کا اردن میں قتل عام کیا تاکہ فلسطینیوں کا اردن سے صفایا کیا جا سکے.ضیاء الحق 1967 ء سے 1970 ء تک اردن میں موجود رہا. اس وقت وہ بریگیڈیئر تھا. اردن میں قیام کے دوران اس کو اردن کے سرکاری اعزاز سے نوازا گیا.ضیاء الحق نے اردن کی آرمی کو تربیت دی.اردن نے 1970 میں اسرائیل مخالف فلسطینی فدائیان کو ملک سے نکالنے کا فیصلہ کیا تو یہی آمر جنرل ضیاء الحق تھا جس نے مشن ٹرینینگ اور فلسطینیوں کے خلاف جنگی پلان مرتب کیا اور فلسطینیوں کے خلاف ہونے والے آپریشن میں اردن کے سپاہیوں کی قیادت کی.اس آپریشن کو ‘کالے ستمبر’ کے نام سے یاد کیا جاتا ہے اور اس میں 25000 کے قریب معصوم فلسطینی اردن کی افواج اورضیاء الحق کے ہاتھوں مارے گئے تھے۔ستمبر 1970 ء کو عربوں کی تاریخ میں بلیک ستمبر کے نام سے یاد کیا جاتا ہے. اس کو ”افسوسناک واقعات کا دور” بھی کہا جاتا ہے.15 ستمبر کو اردن کے بادشاہ نے مارشل لاء لگادیا اگلے دن پاکستانی اور اردن کی آرمی نے ضیاء الحق کی قیادت میں عمان میں موجود فلسطینیوں کے ہیڈ کوارٹر پر حملہ کیا.آرمی نے فلسطینیوں کے کیمپس اربد، السلط، صويلح، البقعة، الوحدات والزرقاء پر حلمہ کیا.اس دوران ضیاء الحق نے سیکنڈ ڈویژن کی قیادت کرتے ہوۓ ہزاروں فلسطینیوں کا قتل عام کیا.اسرائیل جتنے فلسطینی بیس سال میں مار سکتا تھا اس کے مقابلے میں ضیاءالحق نے گیارہ دنوں میں زیادہ سے زیادہ فلسطینیوں کو ہلاک کر دیا. 15 ستمبر  سے لیکر 27 ستمبر تک ظلم کا ایک سیاہ باب لکھا گیا

ضیاءالحق کی یادگار تصویر جب 1970 میں بریگیڈیئر تھا اور اردن میں فلسطینیوں کا صفایا کرنے کا فریضہ سرانجام دے رہا تھا.اس وقت  کے  اسرائیل کے وزیر اعظم  نے کہا تھا کہ” اتنے فلسطینی ہم نے بیس سال میں نہیں مارے جتنے ضیاء الحق نے گیارہ دن میں مار  ڈالے.” بعد میں یہ شخص مرد مومن اور مرد حق کہلایا. اردن نے 1970 میں اسرائیل مخالف فلسطینی فدائیان کو ملک سے نکالنے کا فیصلہ کیا تو یہی آمر جنرل ضیاء الحق تھا جس نے مشن ٹرینینگ اور فلسطینیوں کے خلاف جنگی پلان مرتب کیا۔ اس آپریشن کو ‘کالے ستمبر’ کے نام سے یاد کیا جاتا ہے اور اس میں 25000 کے قریب معصوم فلسطینی اردن کی افواج  اورضیاء الحق کے ہاتھوں مارے گئے تھے۔ اسکے بعد اردن کی شاہی حکومت نے جنرل ضیاء الحق کو خاص اعزازات دیے اور پاکستان میں اس آپریشن کی وجہ سے جنرل ضیاء کو پاکستان میں چیف آف آرمی سٹاف بنایا گیا جسکی بدولت وہ بھٹو حکومت کا تختہ الٹ پایا۔

sources:-

http://lubpak.com/archives/673

http://en.wikipedia.org/wiki/Black_September_in_Jordan

http://www.siasat.pk/forum/showthread.php?147003-Pakistan-s-Role-in-Black-September-and-killing-of-25-000-Palestinians-under-Brig-Zia-Ul-Haq

– See more at: http://lubpak.com/archives/281617?utm_source=twitterfeed&utm_medium=twitter#sthash.UUcysrKA.dpuf

See on lubpak.com

2 thoughts on “بلیک ستمبر ضیاء الحق کے ظلم کا ایک سیاہ باب

  1. اس سے بڑا جھوٹ کوئی نہیں کہ جنرل ضیا نے اردن میں کوئی ظلم کیا تھا ۔۔ درحقیقت اردن میں کچھ فلسطینی گروہ آج تک ٹی ٹی پی کے طرح دہشت گرد ہوگئے تھے جو اسرائیل کے بجائے اردن کے خلاف ہی لڑنے لگے تھے ۔ ان کے خلا ف جنرل ضیاء نے اردن حکومت کی مدد کی تھی ۔۔ یہ ہے اس سارے واقعے کی حقیقت ۔۔ http://www.pakfb.com/general-zia-in-jordan-detail2045.html

    Like

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s