کابل پر طالبان کا قبضہ، پاکستان پر اثرات کیا ہونگے۔ احمد طوری

دہشتگرد حملوں 9/11 کے بعد امریکہ اور اتحادیوں نے اُسامہ بن لادن اور دہشتگردوں کے پناہ گاہوں کو ختم کرنے کےلئے  بیس سال پہلے افغانستان پر حملہ کرکے طالبان سے اقتدار چھینی تھی اور اب واپس طالبان کے حوالے کی ہے،یعنی گیم 2001 سے دوبارہ شروع ہوگئی ہے۔

FILE PHOTO: A Taliban fighter holding an M16 assault rifle stands outside the Interior Ministry in Kabul, Afghanistan, August 16, 2021.REUTERS/Stringer/File Photo

 
امریکہ دورے کے بعد اشرف غنی کو استعفی کے لئے کہا گیا مگر انہوں نے اپنی تقریر میں کہا کہ “امریکی سفیر سے کہاکہ””لاس د خلاص وی”” مطلب استعفی نہیں دینا، جائیں، جو کرنا ہے کرلیں”۔
اشرف غنی کی ہٹ دھرمی ایک طرف، ایسے وقت میں جب طالبان ایک دن میں پانچ صوبوں پر قبضہ کررہے تھےحمدواللہ محب اور امراللہ صالح نے پاکستان کے خلاف محاذ کھول دیا۔ اس کی کوئی ضرورت نہیں تھی، مگر افغانستاناور بھارت میں ایک طبقے کو خوش کرنے کے لئے افغانستان سے اس طرح کی آوازیں اُٹھتی رہی ہیں، جس کا نقصانہمیشہ افغانستان کو ہی ہوا ہے۔ اشرف غنی کی حکومت ڈبونے اور افغانستان کو طالبان کے حوالے کرنے کے اسکے علاوہ بھی کئی عوامل ہیں۔
مثلاً طالبان کے لئے فتوحات کی راہ ہموار کرنے میں حامد کرزئی، عبداللہ عبداللہ اور خلیل زاد قابل ذکر ہیں۔ جو ابراز نہیں رہا۔


افغانستان میں عوام اور اُمراء کے درمیان فرق کافی بڑھ گیا تھا! امریکہ کے ٹریلین ڈالرز زیادہ تر امریکہ واپس ہوئے اورباقی افغان وار لارڈز کے جیبوں میں چلے گئے، کابل اور چند شہروں کے علاوہ امریکی امداد افغانستان کے دور درازعلاقوں میں منتقل نہیں ہوئی، افغانوں میں احساس کمتری بڑھتی چلی گئی۔
اشرف غنی صاحب پر اقرباء پروری کے بھی الزامات لگے ہیں اور وار لارڈز اور جہادی رہنماؤں نے اشرف غنی کویرغمال بنائے رکھا، اور طالبان نے اشرف غنی کے خلاف کامیاب پروپیگنڈا مہم چلائی جیسے غازی امان اللہ خان کےخلاف چلائی گئی تھی، اور نتیجہ بھی اس سے مختلف نہیں ہوگا۔

لہذا عوام کے ہاتھ میں موقع آیا کہ طالبان کے ساتھ مل کر سب کچھ لیول کریں، اور لوٹ مار اور اُمراء کے بھاگنےسے جو محل اور دولت طالبان اور عوام کے ہاتھ لگی ہے وہ عوام مال غنیمت سمجھے ہیں! کم از کم فی الوقت! بعد میںآنے والے حالات کس طرف جائیں گے، یہ افغانستان میں کھبی نہیں سوچا گیا! کابل کئی دفعہ اسطرح سقوط کرچکا ہے! شاہ محمود اور شاہ شجاع کے زمانے میں دو دفعہ، امیر دوست محمد خان کے زمانے میں، اور غازی امان اللہ خان کےزمانے میں! اور اب اشرف غنی کے دور میں بھی وہی ہوا! جو افغانستان کا خاصا رہا ہے۔
کھبی پرامن انتقال اقتدار نہیں ہوا، سوائے حامد کرزئی کے، 1801 سے 2021 تک پچیس دفعہ کابل میں تخت دھڑن تختہہوئے ہیں۔

پچھلے بیس سال سے افغانستان میں ایک بھائی طالبان اور دوسرا حکومت میں رہا، ایک قبیلہ حکومت کے ساتھ مل کردوسرے پر سبقت لینے کی کوشش کرتا رہا تو دوسرا رقیب قبیلہ اپنی بقاء اور تحفظ کے لئے طالبان کے ہاں پناہ لینے پرمجبور تھا۔  اسی طرح مذہبی و مسلکی اور نسلی بنیادوں پر افغان معاشرہ کافی تقسیم ہے جو کچھ طالبان اور کچھ مرکزیحکومت کا ساتھ دیتے نظر آتے۔

اب اتنا ہوا ہے کہ دونوں بھائی اور قبیلے جنگ سے تھک گئے ہیں اور کچھ وقت کے لئے (خدا کرے ہمیشہ کےلئے) بظاہر بندوق رکھنے پر راضی نظر آتے ہیں، مگر افغانستان کے حالات کے بارے میں پیشین گوئی کرنا ناممکن ہے، کسیبھی وقت کچھ بھی ہوسکتا ہے۔

طالبان 2001 میں امریکی حملوں کے بعد دور دراز علاقوں میں چھپے رہے اور کئی علاقوں میں کابل کے متوازی حکومتچلاتے رہے، بیس سال میں وہ ایک نئی نسل تیار کرچکے تھے، جس میں پڑوسی ممالک کے مدارس میں پڑھے ہوئےبچوں کی کثیر تعداد موجود قابل ذکر ہے جو طالبان کی فکری اور جہادی پروجیکٹ کامیاب کرنے میں کافی معاون ثابتہوئے، مگر اصل میں امریکہ اور اشرف غنی کی غلط پلاننگ اور اقرباء پروری اور طالبان ہے ساتھ زیادتیاں بھی قابلذکر ہیں جس کا حامد کرزئی نے کئی مرتبہ امریکہ پر کھول کر تنقید کی۔
مگر امریکی انخلاء کے اعلان نے طالبان کے مردہ گھوڑے میں جاں ڈال دی اور خلائی مخلوق کی طرح افغانستان کے ہرگاؤں، ہر شہر اور ہر گلی و کوچے میں اپنے اہلکار بھیجنا شروع کردیئے جنہوں نے “اغیار” بیس سالہ ناکامیوں سے بھرپورفائدہ اُٹھا کر لوگوں کو اپنا ہمنوا بنانے میں کامیاب ہوئے۔
طالبان کے لئے فتوحات کی راہ ہموار کرنے میں حامدکرزئی، عبداللہ عبداللہ اور خلیل زاد قابل ذکر ہیں، اور اس کا ذکرڈیڑھ ماہ پہلے ایک ارٹیکل میں ذکر کیا جا چکا ہے۔

طالبان کے افغانستان پر قبضہ میں پڑوسی ممالک کے مدد بھی شامل حال رہی اور چین ، روس اور ایران سمیتپاکستان کا نام زبان زد عام ہے۔  پاکستان میں پابندی کے شکار صحافی حامد میر نے واشنگٹن پوسٹ میں اپنے کالم میںاس طرف اشارہ کرتے ہوئے لکھاکہ “پچھلی دو دہائیوں میں پاکستانی فوج ، حکومت اور معاشرے میں ایسے عناصرموجود ہیں جو افغان طالبان کو لاجسٹک اور مادی مدد فراہم کرتے ہیں۔ گو کہ حامد میر کے کافی پرانے لنکس اور فوج کےخلاف رائے ہے مگر جن کا ذکر کیا ہے ان کے “ترجمان” ٹی وی چینلز پر اور سوشل میڈیا پر طالبان کے افغانستان پرقبضہ کو فتح مکہ سے تعبیر کرتے نظر آتے ہیں۔ 

میرا خیال ہے پاکستان کو اکیلے مورد الزام ٹہرانا درست نہیں، امریکہ و اتحادی  جو اپنی ناکامی کا اقرار کررہے ہیسمیت افغان افواج، افغان عوام اور غنی حکومت سب برابر ذمہ دار ہیں۔

طالبان نے جیسے ہی امریکی فوجی انخلاء اور ٹرمپ کی طرف سے مذاکرات کی خبر سنی تو افغاستان کے حکمران کےطور پر ردعمل شروع کیا اور سیاسی ٹیم نے قطر کے علاوہ روس، چین، پاکستان سمیت علاقائی ملکوں کے دورے کیئےاور اپنے آپ کو مستقبل کے حکمرانوں کے طور پیش کیا جس کے افغانستان میں زمینی حقائق پر اثرات مرتب ہوناشروع ہوئے، طالبان ہاری ہوئی جنگ بیس سال بعد جیتنا شروع ہوئے، اور جہاں سے امریکی اور نیٹو فوج کا انخلاءہوتا وہاں پہنچ کر قبضہ کرتے، اس قبضے میں بھاری اسلحہ اور ٹینکوں سمیت آمد و رفت کے تمام وسائل شامل ہوتے،جس سے طالبان طاقت پکڑ کر اگلے محاذ کی تیاری کرتے۔ 

طالبان نے سیاسی حکمت عملی اختیار کی، حامد کرزئی اور عبداللہ اور ان کے حامیوں نے افغانستان کے طول عرضمیں طالبان کے لئے سیاسی راہ ہموار کرنے میں معاونت کی، مذہبی جذبات کو ابھارا گیااور جہاں جرگہ ناکام ہو توطالبان نے بندوق کے زور پر اپنا فیصلہ منوایا، جس سے انحراف ناممکن تھا، اس طرح علاقے کے لوگ اور وہاںکے مقامی انتظامیہ ساری طالبان کے ہاتھوں میں چلی جاتی اور افرادی قوت میں خاطر خواہ اضافہ بھی ہوجاتا۔
جوبائیڈن نے جیسے ہی فوجی انخلاء کا اعلان کیا طالبان جو پہلے دور دراز علاقوں میں مصروف تھے بڑے شہروں کیطرف رُخ کیا۔ اور بڑے شہروں اور صوبائی دارالحکومت پر اسی طریقہ واردات پر عمل کرتے ہوئے طالبان ایک بعددیگر شہر قبضہ کرتے رہے اور اپنے جنگجو نہایت سرعت کے ساتھ منتقل کرتے رہے، جبکہ مقامی لوگ، انتظامیہ اورافغان فوج کے اہلکار جوق در جوق طالبان کے صفوں میں شامل ہوتے رہے، جس سے طالبان اس قابل ہوئے کہصرف 9 دن میں پنجشیر کے علاوہ پورے افغانستان پر قبضہ کرنے میں کامیاب ہوئے۔ 

طالبان نے مذہبی۔سیاسی۔ملٹری تینوں آپشن بیک وقت استعمال کئے، کسی کو تبلیغ، سیاسی اُمراء کو حامد کرزئی اورعبداللہ عبداللہ کے مصلحت کے ذریعے اور جو لڑنا چاہتے تھے انکو امریکی اسلحہ کے ذریعے زیر کیا۔

افغان طالبان نے 6 اگست 2021 کو دور دراز ایران بارڈر پر نیمروز صوبے سے فتوحات کاآغاز کیا اور صرف نو دن میںپنجشیر کے علاوہ پورے افغانستان پر قبضہ کرلیا ہے، جس میں ہرات، کندھار، لشکر گاہ اور مزارشریف جیسے بڑے اوراہم شہر شامل تھے یہ معجزہ 14 اگست یعنی یومِ آزادی پاکستان  کے دن ہوا اور پھر کابل پر ہر طرف سے حملہ آورہوئے ہیں۔ اشرف غنی حکومت کے سارے صوبائی گونر اور فوجی دستے کور کمانڈرز سمیت طالبان کے سامنے سرنڈرکرگئے اور ازبکستان اور ایران کی طرف نکل کر جان بچاتے رہے، طالبان بھارت کے یوم آزادی کے دن کابل میںداخل ہوگئے۔


سقوطِ کابل

سقوطِ  افغانستان 


کابل پر طالبان قبضہ سے ایک دن پہلے وزیر دفاع جنرل بسم اللہ محمدی نےکہا ہےکہ افغان فورسز کابل کے دفاع کےلیے پُرعزم ہیں ، غیر ملکی افواج افغان فوج کی ہر طرح سے مدد کے لیے تیار ہیں ۔ عین اسی وقت افغانستان کےدارالحکومت کابل کے صدراتی محل “ارگ” میں اشرف غنی امریکی نمائیندے زلمئ خلیلزاد سے ایمرجنسی میٹنگ کررہےتھے، تو لگ رہا تھا کہ اشرف غنی کو استعفی پر راضی کیا جارہا ہے، مگر وہ دراصل جان بچانے یا بقول اشرف غنیصاحب خونریزی سے بچنے کے لئے کابل چھوڑنے کی تیار کررہے تھے۔
سابق صدر حامدکرزئی، مصالحتی کمیشن کے سربراہ عبداللہ عبداللہ اور جہادی لیڈر گلبدین حکمتیار پر مشتمل تین رکنی کمیٹیعارضی حکومت اور انتقال اقتدار کی تیار کررہے تھے کہ اشرف غنی کابل سے اپنے قریبی ساتھیوں سمیت نامعلوممقام کی طرف پرواز کرگئے, جس سے طالبان کو کابل پر حملہ کے لئے مناسب جواز فراہم ہوا، حالانکہ طالبان نے کہاتھا کہ کابل پر حملہ نہیں کیا جائے گا! مگر وہ تو ہرات و کندہار پر بھی حملہ نہیں کرنا چاہتے تھے؟ جواز پیدا کرنے کے لئےخلائی مخلوق نے بہترین اور منظم منصوبہ بندی کی تھی، طالبان اور جہادی پروجیکٹ کے ڈائیریکٹرز اب کابل میں اقتدارتبدیل کرنے کے اتنے ماہر ہوچکے ہیں کہ کسی کو ملوث ہونے کا شک و شبہہ بھی نہیں ہوتا! یہ تو ڈائیریکٹرز کو لگتا ہے مگرپتہ سب کو ہوتا ہے۔

افغانستان کے صدر اشرف غنی وزارت دفاع میں اہم میٹنگ کا کہہ کر ہیلی کاپٹر میں سوار ہوئے اہل خانہ اور قریبی ساتھیوں کے ساتھ ملک چھوڑ کر چلے گئے، جس کے بعد کابل میں خوف و ہراس پھیل گیا اور طالبان قیادت نے اپنےجنگجوؤں کو دارالحکومت کابل میں داخل ہونے کی اجازت دے دی جبکہ افغان اور غیر ملکی شہری جان بچانے کےواسطے کابل ائیرپورٹ کی طرف بھاگنے لگے۔

Kabul airpor


طالبان ہر طرف سے کابل کی طرف اُمڈ آئے اور یہ سلسلہ ابھی تاک جاری ہے، مگر خدا کا شکر ہے کہ سب معاملات“منصوبے” کے مطابق طے ہوئے اور بغیر خونریزی کے طالبان نے بیس سال بعد کابل پر دوبارہ قبضہ کیا، صدارتی محلجا کر اپنا سفید جھنڈا لہرایا جس پر کلمہ طیبہ اسود نمایاں لکھا ہے۔
کابل کی کشادہ سڑکیں، جدید پارک، بلند و بانگ بلڈنگ اور جیم اکثر طالبان نے پہلی دفعہ دیکھے لہذا وہ چھوٹے بچوں کیطرح پارکوں میں کھیلتے نظر آئے، اور اپنے لڑکپن کے سارے ارمان پورے کیئے۔

افغان طالبان کے سیاسی ونگ کے سربراہ ملا عبدالغنی برادر اخوند نے کہا ہے طالبان کو جس طرح کامیابی ملی اس کاگمان بھی نہ تھا۔ اللہ تعالیٰ کی مدد سے فتح ملی۔ دراصل طالبان نے امریکی انخلاء کے خلاء کو پُر کیا ہے۔ اور اس خلاءکو نہایت سرعت سے پیدا کیاگیا ہے، جس کو اب منصوبہ ساز بھی سمجھ نہیں پارہے۔ اصل میں برطانیہ اور شاہ شجاعکے ساتھ پہلی اینگلو افغان وار 43-1842 میں جو ہوا تھا وہی تاریخ دہرائی گئی ہے، یہ الگ بات ہے کہ امریکیوںفوجیوں کو وہ قیمت نہیں ادا کرنی پڑ رہی جو برطانوی فوج کو ادا کرنی پڑی تھی، اور اشرف غنی نے بھی اپنے آپ کوشاہ شجاع یا ڈاکٹر نجیب بننے سے بچایا! جس کا اظہار انہوں نے ابوظہبی سے اپنے خطاب میں کیا ہے۔ مگر طالبان نےسقاؤسٹ کی طرح کابل پر چھڑھائی کی ہے۔

امریکی صدر جوبائیڈن نے کہا کہ ہمیں افغان آرمی کی اتنی جلدی ہتھیار ڈالنے کی توقع نہیں تھی۔ اورجو لڑائی افغان فوجنہیں لڑنا چاہتی وہ امریکی فوج کیوں لڑے؟

صرف ڈیڑھ مہینہ پہلے افغاستان کے حالات پر لکھا تھا جب افغان صدر اشرف غنی امریکہ کے دورے پر جانے والےتھے! کہ ““اس ساری صورتحال میں اشرف غنی امریکہ کا دورہ کررہے ہیں اور سفارتی ذرائع کا کہنا ہے کہ اشرف غنیکو استعفٰی دینے پر راضی کیا جاسکتا ہے تاکہ طالبان کو قومی حکومت میں شامل ہونے پر راضی کیا جاسکے۔
مگر طالبان جاتے ہوئے امریکہ سے مذاکرات اور امریکہ کے کٹھ پتلی اشرف غنی کے ساتھ بیٹھ کر قومی حکومت میں کوئیدلچسپی نہیں رکھتے اور اشرف غنی نے بھی ایک ٹی وی انٹرویو میں ڈاکٹر نجیب اللہ پر طنز کرتے ہوئے کہا کہ ’ڈاکٹرنجیب نے استعفی دے کر غلطی کی تھی، میں وہ غلطی نہیں دہراؤنگا‘ مگر حالات اتنی تیزی سے تبدیل ہورہے ہیں کہ اگربروقت طالبان کی پیش قدمی نہ روکی گئی اور بین الاقوامی مدد نہ کی گئی تو طالبان سالوں کی بجائے مہینوں میں کابل کامحاصرہ کرسکتے ہیں، اور امریکہ بھی جان چکا ہے اسی لئے کابل ہوائی اڈہ ترکی کے حوالے کرنے کا سوچ رہا ہے تاکہبھاگنے کا ایک راستہ تو کھلا رہے””۔

اور جب اشرف غنی امریکہ سے خالی ہاتھ لوٹے تو پھر ایک ارٹیکل میں تفصیل سے حالات کی منظر کشی کی تھی۔
افغانستان کے ڈھائی سو سالہ تاریخ پر نظر دوڑائیں تو موجودہ صورتحال کا بخوبی اندازہ لگایا جا سکتا تھا۔ افغان قبائیلیسسٹم، اتھنک سسٹم، افغان عوام میں اغیار کے خلاف نفرت اور محبت دونوں ذہن میں رکھتے ہوئے افغان طالبانکی اسلامی نیچر اور بلوؤں کا طریقہ واردات سب سامنے رکھتے ہوئے کابل پر طالبان کا قبضہ دیوار پر لکھا تھا۔

افغانستان کے قائم مقام وزیر دفاع جنرل بسم اللہ محمدی اچانک ملک سے فرار ہونے پر افغان صدر اشرف غنی پربرس پڑے۔ جنرل بسم اللہ محمدی نے افغان صدر پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ ‘اس نے ہمارے ہاتھ ہماری پیٹھ کےپیچھے باندھے اور وطن کو بیچ دیا ، غنی اور اس کے گروہ پر لعنت ہو’۔

جبکہ اشرف غنی کی حکومت کی وزیرِ تعلیم رنگینہ حمیدی کا کہنا ہے کہ مجھے صدمہ پہنچا ہے اور یقین نہیں آ رہا۔’ انھیںصدر غنی سے ایسے ملک چھوڑ جانے کی توقع نہیں تھی۔


ماضی کی کچھ یادیں

مگر افغانستان (کابل و کندھار، غزنی و جلال آباد) ماضی میں کئی دفعہ روندا گیا، شاہ محمود، شاہ زمان، شاہ شجاع اوردوست محمد خان کے بھائیو ں نے 1801, 1809 1818، 1837 میں کابل پر حملے کرکے قبضہ کیا مگر طالبان سٹائل قبضہ1929 میں حبیب اللہ خان کلکانی نے (بچہ سقہ) بالکل طالبان سٹائل کابل کا محاصرہ کیا اور غازی امان اللہ خان کوبادشاہت سے فارغ کرکے بیرونی ملک رہنے پر مجبور کیا جو باہر ہی وفات ہوئے، اور جنازہ واپس لاکر جلال آباد میںدفنایا! پھر صرف دس ماہ بعد نادر خان درانی (نادر شاہ) نے بیرون ملک سے اگر حبیب اللہ کلکانی کا قلع کرنے کے لئےکابل پر ہر طرف سے حملہ کیا اور بچہ سقہ کو اقتدار سے باہر کرکے پھانسی دی، خود بادشاہ بن گئے۔ نادر شاہ ظاہر شاہ کےوالد تھے۔

برطانوی فوج کے ساتھ امریکیوں سے زیادہ برا ہوا تھا جب غازی اکبر خان نے کابل سے لے کر تورخم تک 16 ہزارفوج میں سے صرف ایک ڈاکٹر کو شاید یہ میسیج پہنچانے کے لئے چھوڑا تھا کہ جاؤ اور انہیں خبر کردو کہ 16 ہزار برطانویاور لگ بھگ 30 ہزار ہندوستانی فوج تقریباً ساری افغانیوں کے ہاتھوں مارے گئے ہیں۔ یہ 42-1843 کی بات ہے۔مگر نہ افغانوں سے سبق سیکھا نہ مغرب اور روسیوں نے!

امیر دوست محمد خان نے اس وقت برطانوی جنرل سے کہا تھا کہ افغانستان میں صرف پہاڑ و پتھر ہیں اور آدمی ہیں! آپ یہاں کرنے آتے ہیں؟

پھر بھی روس 1979 افغانستان پر حملہ آور ہوا، جہادی قوتوں جس کو امریکی و اتحادی سپورٹ حاصل تھی کے ہاتھوذلیل و رسوا ہوکر 1989 میں واپس ہوا اور اپنی دنیاوی عزت کے ساتھ سوپرُپاؤر بھی گنوا بیٹھے!! اور 90s میں گلبدینحکمتیار کی کابل پر بمباری کھبی نہیں بولنا چاہیے جس نے کابل کو کھنڈرات میں تبدیل کیا تھا۔ اس لئے روس امریکہ کیافغانستان میں شکست پر خوش ہو کر بدلے کی آگ بجھا رہے ہیں اور طالبان کے لئے نرم گوشہ رکھتے ہیں۔روس کےافغانستان کے لئے خصوصی نمائیندے ضمیر کابلوف کے بیانات سب کے سامنے ہیں۔

برطانوی اور روسیوں سے کسی نے کوئی سبق نہیں سیکھا اور ایک بار پھر 2001 میں امریکہ اور بار نیٹو انہی مجاہدین کےخلاف اعلان جنگ کرتے ہوئے افغانستان میں کود پڑے جو انہوں روس کے خلاف بنائے تھے، بیس سال بعد 2021 میں امریکہ اور نیٹو نے افغانستان انہی طالبان کے حوالے کرکے اپنا بوریا بستر لپیٹ کر واپس بھاگ رہے ہیں اورہزاروں افواج کابل کے حامد کرزئی انٹرنیشل ائیرپورٹ انخلاء کے لئے پریشان ہیں کہ زندہ واپس بھی ہونگے یا پہلیاینگلو۔افغان جنگ میں برطانوی افواج کی طرح صفایا کردیا جائے گا؟
مگر طالبان اب کہہ رہے ہیں کہ بدل گئے ہیں اس لئیے بیرونی افواج (اغیار) کو زندہ واپس جانے کی سہولت دستیابہے۔

افغانستان میں اکیسویں صدی میں کو ہورہا ہے وہ ففتھ جنریشن وار کی بہترین مثال ہے، شاید ففتھ جنریشن وار سےبھی کچھ اگے! کسی کو کوئی پتہ نہیں، کہ افغانستان میں کیا ہورہا ہے؟ کون کررہا ہے؟ کل کیا ہوگا؟ مستقل کیا ہے؟امریکہ کے سارے تھینک ٹینکس اور سی آئی اے و ایف بی آئی ناکام ہوئے، بھارت کو کوئی خبر نہیں کہ ان کے ساتھافغانستان میں کیا ہوا! طالبان نے ایران جا کر آگاہ کیا تھا اور اعتماد بھی حاصل کیا تھا، کہ ایران کے مفادات کاخیال رکھا جائے گا، اور طالبان نے ایران کے مفادات کو ابھی تک ہاتھ نہیں لگایا ہے، ظاہر ہے، انقلاب، انقلاب کودیکھ کر رنگ پکڑتا ہے۔

طالبان نے افغانستان پر قبضہ کے بعد کہا ہے کہ افغانستان میں جنگ کا خاتمہ ہوگیا، عالمی برادری کے ساتھ مل کر چلناچاہتے ہیں، طالبان کسی اور ملک کے معاملات میں مداخلت نہیں کریں گے اور چاہتے ہیں کوئی دوسرا ملک بھیہمارے معاملات میں مداخلت نہ کرے۔ افغانستان کا کنٹرول سنبھالنے کے بعد طالبان نے اپنی پہلی نیوز کانفرنس میںطالبان ترجمان ذبیح اللہ مجاہد نے کہا کہ گروپ حکومت بنانے کے لیے متحرک ہو کرکام کر رہا ہے اور اس کا اعلان’مکمل ہونے کے بعد کیا جائے گا’۔

افغانستان میں طالبان اقتدار کے پاکستان پر اثرات

جب بھارت یوم آزادی کا جشن منا رہے تھے تو افغانستان میں ان کے اتحادی افغان طالبان کے سامنے ہتھیار ڈالکر تسلیم ہورہے تھے، بھارت کی چیخیں نکل گئیں، اور پاکستان میں جنرل ر حمید گل کی برسی پر ان کے ہم خیال کابلپر طالبان کے قبضے کا جشن منارہے تھے، تو ظاہر ہے بھارت خلاف اور طالبان کی حامی جذبات پاکستان میں بہ درجہاتمم موجود ہے، لہذا اس حوالے سے پاکستان کے اس طبقے نے طالبان فتح کو خوش آمدید کہا، اور بھارت کو ہر فورمپر آڑے ہاتھوں لیا۔


افغان طالبان کے افغانستان پر قبضہ کے پاکستان پر مضمر اثرات پڑنے والے ہیں، پاکستان میں شریعت کے نفاذ کامطالبہ تو کافی پرانا ہے مگر اس میں جان پڑ گئی ہے اور جمیعت و جماعت کے ساتھ ساتھ تحریک لبیک و دیگر اسلامیسیاسی پارٹی کی لیڈرشپ اور کارکنوں نے افغان طالبان کی فتح کو فتح مکہ سے تشبیہ دی ہے۔ اور پاکستان کےوزیراعظم نے کہا کہ “افغانستان میں غلامی کی زنجیریں ٹوٹ گئیں”۔

ایران انقلاب کے پاکستان پر اثرات تو بہت کم پڑ گئے تھے مگر ایران انقلاب کے بعد پاکستان میں ایران مخالفجذبات ابھر کر سامنے آئے تھے جس کے ردعمل میں سپاہ صحابہ اور لشکر جھنگوی جیسے شدت پسند تنظیمیں معرض وجودمیں لائی گئیں جو آج تک کئی نام بدل کر وہیں موجود ہیں، اور پاکستان آج تک اثرات سے نبرد آزما ہے۔
مگر انقلاب افغانستان کے دور رس نتائج ہونگے۔ پاکستانی طالبان اور افغان طالبان ایک ہی نظریہ کے حامل ہیں اورافغان طالبان کے سپریم لیڈر ہی پاکستانی طالبان کے “سپریم لیڈر” ہیں۔

یہ تو کوئی ڈھکی چھپی بار نہیں رہی کہ امریکہ اور دوست عرب ممالک کے ساتھ مل کر افغانستان میں جہادی پروجیکٹمیں پاکستان کا کلیدی کردار تھا، اور پاکستان نے اس کا خمیازہ بھی بھگتا ہے، مگر حالیہ طالبان فتح کے اثرات مختلفہونگے۔ اس جہادی پروجیکٹ سے سارے ممالک نے فائدہ اُٹھایا اور پاکستان نے نقصان ہی نقصان اُٹھایا ہے اورملک میں ایک ایسی فصل تیار ہوئی ہے جس کو روکنا تو مشکل بلکہ ناممکن لہذا انہیں “مین سٹریمنگ” کے نام پر اداروںمیں ضم کیا جارہا ہے، جس سے اداروں ان کی جڑیں راسخ ہوچکی ہیں، جس کا انجام نہایت عبرت ناک ہوسکتا ہے۔دہشتگرد اور کالعدم سپاہ صحابہ کے ممبر صوبائی اسمبلی پنجاب کے نصاب کمیٹی کے رکن ہیں، اسی طرح خیبر پختونخواہنصاب کمیٹی میں بھی سپاہ صحابہ (جو اب دوسرے کئی ناموں سے آپریٹ کرتے ہیں) کی “مہارت” سے فائدہ اُٹھایا گیاہے لہذا ایک نظام نصاب تیار ہوا ہے جس سے پاکستان بھر کے سرکاری سکول دینی مدارس میں تبدیل ہوتے نظرآئیں گے، اور جو کھیپ تیار ہوگی وہ افغان جہادی پروجیکٹ سے زیادہ خطرناک ہے۔ یہ ایک مثال ہے، باقی پولیساور ہر ادارے میں “مین سٹریمنگ” کے نام پر شدت پسندوں کو “ایڈجسٹ” کیا جارہا ہے۔

پاکستان کے وزیر داخلہ اور وزیراعظم مان چکے ہیں کہ پاکستان میں افغان طالبان کے گھر اور اہل خانہ موجود ہیں، مگرمعاملات اس سے بڑھ کر ہیں۔ جنرل ر شاہد عزیز اس وقت کہاں ہیں یہ بات چھوڑیں، جنرل ر خالد لودھی، جنرل رشعیب، جنرل ر اعجاز اور بریگیڈئیر فاروق حمید سمیت اس قبیلے کے دفاعی تجزیہ نگار اور اوریا مقبول جان،انصارعباسی، عمران ریاض جیسے سیاسی “داعشور” طالبان کے ترجمان زیادہ نظر آتے ہیں، جس سے پاکستان میں “جہادیمائنڈ سیٹ” کو تقویت مل رہی ہے۔

پاکستان میں افغان طالبان کی فتح پر جشن منانے والوں کے علم میں ہے کہ پاکستانی طالبان کے سارے اڈے افغانطالبان کے زیراثر افغانستان میں موجود تھے اور وہ وہیں سے پاکستان کے خلاف کارروائیاں کرتے رہے ہیں، جس میںآرمی پبلک سکول کے ڈیڑھ سو معصوم طلباء پر حملہ سمیت ہزاروں دہشتگرد کاروائیاں شامل ہیں، جس میں پاک فوجکے اہلکاروں سمیت ایک لاکھ افراد قتل ہوئے ہیں۔ افغان طالبان نے کھبی پاکستانی طالبان سے لاتعلقی ظاہر نہیں کیہے اور کابل فتح کے بعد محمد مالک کے شو میں ذبیح اللہ مجاہد نے برملا کہا کہ ہم پاکستانی طالبان کو پاکستان کے حوالےنہیں کریں گے، مگر یہ ضرور کہا کہ انہیں افغان سرزمین استعمال نہیں کرنے دیں گے۔


طالبان نے افغانستان فتح کرتے ہوئے سارے جیل توڑ ڈالے ہیں جس سے پاکستان طالبان جو افغان حکومت نےگرفتار کرکے جیلوں میں ڈالے تھے سب رہا کرکے گلوں میں ہار پہنا کر خوش آمدید کہا گیا ہے جس میں مولوی فقیر محمدقابل ذکر ہے جس کے القاعدہ رہنما ایمن الظواہری سے قریبی تعلقات رہے ہیں اور وہ پاکستان کو مطلوب دہشتگردوںمیں سرفہرست ہے۔ اس طرح سینکڑوں پاکستانی طالبان دہشتگرد افغان جیلوں سے رہا ہوچکے ہیں جو پاکستان کےقبائیلی اضلاع کے لئے سنگین خطرہ ہے اور پچھلے دو ہفتوں میں پاکستان میں بلوچستان “داسو” سے لے کر کراچیاورضلع کرم و اورکزئی تک ایک درجن دہشتگرد کاروائیاں ہوئی ہیں، جبکہ گلگت میں طالبان کھلے عام کچہری کرتے نظرآئے ہیں، یہ سب پاکستان کے لئے خطرے کی گھنٹیاں ہیں۔

پاکستان کے اسلامی سیاسی پارٹیوں میں افغان طالبان کے کابل میں اقتدار ملنے سے ایک نیا جوش اور ولولہ پیدا ہواہے اور اس سے بڑھ کر پاکستان میں 80s سے مدارس کا ایک جال بچایا گیا ہے جس میں لاکھوں طالبان افغان طالبانکے اس فتح سے حوصلہ پائیں گے کہ “افغان انقلاب” پاکستان میں بھی امپورٹ کریں۔

مستقبل 

افغاستان میں طالبان اقتدار کے خدوخال ابھی تک ظاہر نہیں ہوئے، مگر امارت اسلامی افغانستان اپنے سفید جھنڈےپر کلمہ اسلام کے ساتھ امیرالمؤمنین اور شوری سیٹ۔اپ کے ساتھ ظہور پزیر ہونے پر اسرار کررہے ہیں جبکہ عوامنے جھنڈا تبدیل کرنے کے خلاف احتجاج کیا ہے جس پر جلال آباد میں طالبان نے فائرنگ کرکے منتشر کردی ہے۔جبکہ احمد شاہ مسعود کے بیٹے اور امراللہ صالح نے مزاحمت کا اعلان کیا ہے جس سے کچھ قوتیں فائدہ اُٹھا سکتے ہیں، مگرطالبان رہنما عبداللہ عبداللہ سے مل کر پنجشیر کو زیر کرنے میں مصروف ہیں۔


طالبان اسرار کررہے ہیں کہ حکومت بنانا انکا حق ہے کیونکہ انہوں قبضہ کیا ہے اور دیگر اقوام کو مناسب نمائیندگی بھیوہ خود دیں گے، جو قبول نہیں کیا جارہا اور زیادہ تر شمالی اتحاد کے لیڈرشپ پاکستان میں بیٹھی ہے، جس میں احمد شاہمحسود کے دو بھائی، ہزارہ رہنما محقق اور کرم خلیلی اور صلاح الدین ربانی اور یونس قانونی شامل ہیں۔
طالبان پاکستان میں موجود شمالی اتحاد کے رہنماؤں کے بارے میں ابھی تک کھول کر کچھ کہا تو نہیں مگر اس پربداعتمادی بڑھ سکتی ہے۔ 

اس میں کوئی شک نہیں کہ افغانستان میں بیس سال بعد ٹریلین ڈالر خرچ کرکے امریکہ و اتحادی تباہ کن شکست سےدوچار ہوئے ہیں اور اہداف حاصل کرنے میں ناکام  ہوئے ہیں۔ کیونکہ طالبان 2001 سے زیادہ طاقتور ہیں اور القاعدہ،داعش کی صورت میں اور زیادہ خطرناک ہے، طالبان داعش کے بطور سیاسی قوت خلاف ہیں ورنہ حالیہ افغانستان پرقبضہ میں پاکستانی دہشتگرد گروہ طالبان (خاص کر کنڑ میں) اور داعش طالبان کے شانہ بشانہ لڑے ہیں۔ ان میں نظریاتیکوئی اختلاف نہیں۔

امریکی صدر جوبائیڈن نے کہا ہے کہ افغانستان سے امریکی فوج کی واپسی کا فیصلہ درست تھا اورجو لڑائی افغان فوجنہیں لڑنا چاہتی وہ امریکی فوج کیوں لڑے؟  جبکہ کونڈولیزا رائس نے کہا کہ طالبان کی ساتویں صدی کی حکومت اورتیس سالہ خانہ جنگی سے ایک مستحکم حکومت تک کا سفر مکمل کرنے کے لیے بیس سال کافی نہیں تھے۔ امریکا نے 20 برسوں کے دوران ایک جدید افغان فوج کھڑی کرنے کے لیے 83 ارب ڈالر خرچ کیے جو پاکستانی روپے میں ایکنیل 35 کھرب 95 ارب 83کروڑ اور 16 لاکھ روپے بنتے ہیں۔

بنی ہاشم غروہ بدر. سے کربلاء میں عاشوریٰ حسینی تک- احمد طوری

قُرَیش ، حجاز کے عرب قبائل میں سے اہم ترین اور مشہور ترین قبیلہ تھا اور. پیغمبر اکرمؐ کا تعلق بھی اسی قبیلے سے ہے۔اور عبدالمناف قریش کے ایک سردار تھے۔

بنی ہاشم اور اور. بنی امیہ کی عناد عبد مناف کے بیٹوں ہاشم اور عبد شمس کے پیدا ہوتے ہی شروع ہوئی جب پیدائش کے بعد دونوں کے دھڑ (دھڑ یا اُنگلی) تلوار کی وار سے جدا کئے گئے۔ ہاشم والد کے فوت ہونے کے بعد حرم مکہ کے متولی ہوئے تو عبدشمس کو مکہ سے ہی نکال دیا تاکہ بھائی طاقتور ہوکر کہیں وراثت پر قبضہ کی کوشش نہ کرے! اب اس وراثت میں مذہبی اثر و رسوخ، طاقت، پیسہ اور حرم. مکہ میں زائرین کی خدمت (جو آج بھی پچاس ارب ڈالر بزنس سے زیادہ ہے) شامل ہیں تو یہ مل کر ایک پوری ریاستی قوت بن جاتی ہے اگر تگڑا قبیلہ پشت پر ہو!

عبدشمس کے بعد انکے بیٹے امیہ نے بنی امیہ خاندان کی باقاعدہ بنیاد رکھی اور بنی ہاشم سے ٹکر لینے کے لئے کمر کس لی۔ یہاں مزید بحث نہیں کرتے! (۱)

جب بنی ہاشم کے چشم و چراغ حضرت. محمد صلی للّٰہ علیہ و الہ وسلم مبعوث ہوئے تو غزوہ بدر و اُحد اور خندق میں بنی امیہ کے سردار ہی سب سے آگے تھے اور بیشتر بنی ہاشم جوانوں کے ہاتھوں قتل ہوئے۔ فتح مکہ پر بنی امیہ کے سردار ابوسفیان ایسے حالت میں مسلمان ہوئے جب بھاگنے کی کوئی راہ نہیں بچی۔

آل امیہ جب مسلمان ہوئے تو مشکل سے ضم ہوئے! ابوسفیان نے سفارش پر بیٹے معاویہ کو آخری سال منشی لگوایا اور اپنی بیٹی کو رسول اللہ کی عقد میں دے کر مسلمانوں میں کچھ عزت بحال کرنے کی کوشش کی۔

وفات پیغمبر اکرم صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کے بعد ہی صحابہ کرام کے بیچ اختلافات اُٹھ چکے تھے۔ ابوسفیان نے حضرت ابوبکر رضی اللہ کے خلافت کی اسلئے مخالفت کی کہ وہ قریش کے ایک غیر معروف شاخ سے تعلق رکھتے تھے اور جا کر بنی ہاشم کے حضرت کو حمایت کا یقین دلایا جو خود سقیفہ بنی ساعدہ میں ہوئے فیصلے کی وجہ سے ناراض بیٹھے تھے۔ حضرت علی علیہ سلام نے ابوسفیان کی آفر رد کرتے کرتے ہوئے فرمایا کہ “بنی امیہ کب سے اسلام کے خیرخواہ ہوئے؟

جب پیغمبر اکرم دفن بھی نہیں ہوئے تھے اور سقیفہ بنی ساعدہ میں انصار و مہاجرین (مدینہ و مکہ والے) آپس میں جانشینی (خلافت) پر گفت و شنید کے لئے بیٹھ گئے جبکہ حضرت علی ع رسول اللہ ص کے کفن و دفن میں مصروف تھے۔ (۲)

خلافت پر مزید بحث مقصود نہیں،

تیسرے خلیفہ حضرت عثمان بن عفان رضی اللہ عنہ کی شہادت کے بعد اُمت نے حضرت علی ابن ابی طالب علیہ سلام کو خلیفہ چہارم منتخب کیا (۳) تو شام کے گورنر امیر معاویہ بن ابوسفیان کو برطرف کردیا۔ امیر شام جسے خلیفہ دوم حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے ۱۸ھ میں گورنر دمشق مقرر کیا تھا، علم بغاوت بلند کرتے ہوئے خلیفہِ وقت کا حکم ماننے سے صاف انکار کیا۔ امیر شام نے خلیفہ سوئم کے قصاص کا بہانہ بنا کر لوگوں کو اشتعال دلایا ۔ (۴) اور بات جنگ و جدل سے ہوتی ہوئی چوتھے خلیفہ کی المناک شہادت پر ختم ہوئی۔

اب امت مسلمہ نے حضرت علی ابن ابی طالب کے بڑے صاحبزادے امام حسن ابن علی کو خلیفہ چنا تو امیر شام اب بہت مضبوط ہوکر دمشق میں اُموی بادشاہت قائم کرچکے تھے ایک بار پھر تلوار اُٹھا کر جنگ و جدل شروع ہوئی تو ایک باقاعدہ معاہدے (۵) کے تحت مسند خلافت پر قابض ہوئے جس کی ایک شق یہ تھی کہ امیر شام کسی کو ولی عہد یا اپنے بعد خلیفہ مقرر نہیں کرے گا اور دوسری شق خلیفة المسلمین. چہارم حضرت علی کی شان میں گستاخی اور گالم گلوچ نہ کرنے کی تھی جو وہ اپنے زیر اثر علاقوں میں جمعے کے خطبوں میں واجباً کرتے رہے، جبکہ معاہدے کے بعد بھی سب و شتم جاری رہا۔ (۶)

اموی خلیفہ امیر معاویہ بن ابوسفیان نے وفات سے پہلے اپنے بیٹے یزید کو ولی عہد بنا کر امام حسن سے معاہدے کی خلاف ورزی کی اور اسی فیصلے نے اسلام کی بنیادی ہلا کر رکھ دیں، سیرت شیخین رض کے برخلاف خلافت کو ملوکیت اور بادشاہت میں تبدیل کرتے ہوئے بنی امیہ قابض ہوئے۔ اب بنو امیہ اور بنو ہاشم کی عداوت اور شامی و علوی سیاست پر بحث مقصود نہیں جس پر کھبی بات ہوگی۔

امام حسن ابن علی. ۵۰ھ میں زہر دے کر شہید کردیئے گئے تو امیر شام معاویہ ابن ابوسفیان نے یزید بن معاویہ کو ولی عہد بنایا اور یزید بن معاویہ ۶۰ھ میں باپ کے وفات کے بعد اُموی شاہی تخت پر برجمان ہوئے۔ (۷)

نواسہ رسول امام حسین ابن علی ع سمیت عبداللہ ابن عمر رض، عبدالرحمن بن ابوبکر رض اور عبداللہ ابن زبیر رض سمیت بزرگ صحابہ سے بیعت طلب کرتے ہوئے مدینہ کے گورنر ولید بن عتبہ بن ابوسفیان (یزید کے چچازاد) کو خط لکھا، لیکن کوئی بھی بزرگ صحابی یزید بن معاویہ بن ابون سفیان کے ہاتھ پر بیعت کے لئے تیار نہیں ہوئے۔ یزید نے خط کے ساتھ ایک ورقہ پر نوٹ بھی ارسال کیا جس میں بیعت نہ کرنے کی صورت میں صحابہ خاص کر امام حسین ع کو قتل کرنے کا حکم دیاگیا تھا۔ (۸)

بدترین دشمن تاریخوں میں بھی یہ نہیں ملے گا کہ امام حسین ع نے مدینہ منورہ میں یا مکہ پہنچ کر حکومت کی تشکیل کے سلسلے میں کوئی بات کی ہو بس “مجھ جیسا تجھ جیسے کی بیعت نہیں کرسکتا” کہہ کر وارث رسول اللہ، وارث دین، نواسہ رسول، جگر گوشہ بتول امام حسین ع نانا کے شہر مدینہ منورہ چھوڑنے پر مجبور ہوئے کہ یہی اموی خلیفہ کے ہاتھوں قتل سے بچنے کا واحد حل نظر آیا۔

امام عالی مقام اپنے اہل خانہ کے اکیس ۲۱ اور تقریباً دس ۱۰ اصحاب کے ساتھ رات کی تاریکی میں مدینہ سے نکلے اور مکہ پہنچ گئے۔ (۹)

امام حسین ع کے مکہ پہنچتے ہی شعب علی (محلے) میں خوشی کی لہر دوڑ گئی کہ اب امام امن کے شہر میں وارد ہوچکے ہیں۔ جب مکہ میں ملاقاتوں کا سلسلہ شروع ہو تو عبداللہ ابن زبیر. خائف ہوئے جو خود مکہ پر قبضے کا سوچ رہے تھے کہ امام مکہ میں بیعت لینے کا سلسلہ شروع نہ کریں لہذا امام کو صبح و شام عراق جانے کے مشورے دیتے رہے (۹) اور ساتھ ہی اہل کوفہ کے خطوط موصول ہونا شروع ہوئے جن کو امام کے بیعت سے انکار کی خبر پہنچ چکی تھی اور اہل عراق بنی امیہ کے حکمرانی سے تنگ آچُکے تھے۔

اہل کوفہ کی طرف سے امام حسین ع کو کئی سو خطوط لکھے گئے کہ امام آپ آجائیں ہماری امامت کریں۔ یہ خطوط کوفہ کے سرکردہ بزرگان سلیمان بن صرد، مسیب، رفاعہ بن شداد، حبیب ابن مظاہر، شبث بن ربعی، حجار بن ابجر، یزید بن حارث سمیت سینکڑوں افراد اور کئی قبیلوں کے سربراہوں. کی طرف سے لکھے گئے اور اکثر خطوط قیس بن مسہر صیداوی، عبدالرحمن بن شداد، عمارہ بن عبداللہ سلونی، عبداللہ بن سبع ہمدانی، ہانی بن ہانی سبیعی، سعید بن عبداللہ حنفی لے کر. مکہ میں امام کے پاس پہنچے، تمام عراقی ایلچی امام عالی مقام سے ملے اور خطوط پیش کئے۔ (۱۰)

امام نے خطوط پڑھے اور ایک جوابی خط ہانی بن ہانی سبیعی اور سعید بن عبداللہ حنفی کے ساتھ واپس اہل عراق کی طرف روانہ کیا۔ خط میں امام نے کوفہ آنے کی حامی بھرتے ہوئے لکھا کہ اگر آپ لوگوں کی اتنی شدید خواہش ہے تو میں اپنے عم زاد بھائی مسلم بن عقیل کو اپنا معتمد خاص اور سفیر بناکر بھیج رہا ہوں، اگر انہوں نے مجھے حالات سے آگاہی کے بعد جواب دیا کہ حالات وہی ہیں جو آپ کے خطوط میں بیان کیاگیا ہے اور جو آپ کے ایلچی بتا رہے ہیں تو میں جلد ہی مکہ سے روانہ ہو کر آپ کے پاس عراق پہنچ جاؤنگا۔

اس کے فوراً بعد امام عالی مقام نے قیس بن مسہر صیداوی، عبدالرحمن بن شداد، عمارہ بن عبداللہ سلونی کے ہمراہ مسلم بن عقیل کو اپنا سفیر بناکر اہل کوفہ و عراق کی طرف بھیج دیا۔

جناب مسلم وسط رمضان میں مکہ سے. نکلے اور مدینہ سے ہوتے ہوئے آخر کار پانچ شوال ۶۰ھ کو جناب مسلم کوفہ پہنچ گئے اور دیکھتے ہی دیکھتے اٹھارہ ہزار افراد مسلم بن عقیل کے گرد جمع ہوئے اور جناب مسلم نے حالات کا جائزہ لینے کے بعد امام علیہ السلام کو خط لکھا اور انہیں کوفہ آنے کی دعوت دے دی۔ اور امام عالی مقام نے حج کو عمرے میں بدلتے ہوئے ۸ ذی الحج ۶۰ھ. کو چند ساتھیوں اور اپنے خاندان کے ساتھ مکہ سے کوفہ کی طرف روانہ ہوئے۔

اس وقت نعمان بن بشیر کوفہ کے گورنر تھے۔

حالات کی خبر شام میں اموی بادشاہ یزید بن معاویہ بن ابو سفیان تک پہنچی تو انہوں نے بصرہ کے گورنر نعمان بن بشیر کو معزول کرتے ہوئے عبیداللہ ابن زیاد کو کوفہ کے گورنر کا اضافی چارج دیتے ہوئے حکم دیا کہ مسلم بن عقیل اور ان کے پیروکاروں کو کچل دو۔

عبیداللہ بن زیاد نے حکومت کو اپنے ہاتھ میں لے کر لوگوں کو ڈرانا دھمکانا شروع کر دیا۔ ہانی بن عروہ کو جو کوفہ کے بزرگان میں سے تھے اور جناب مسلم ان کے گھر ٹھہرے ہوئے تھے کو گرفتار کر دیا تو کوفہ کے حالات تبدیل ہونا شروع ہوئے۔

جناب مسلم نے جب ہانی کی گرفتاری کی خبر سنی تو اہل کوفہ سے مطالبہ کیا کہ ہانی کی مدد کو نکلیں۔ لوگ جمع ہو گئے، مسجد کوفہ، اطراف کا بازار اور دار الخلافہ لوگوں سے بھر گیا، جب کہ عبید اللہ کے پاس اس وقت پچاس افراد بھی نہیں تھے۔

عبید اللہ نے انتہائی چالاکی اور سیاست سے کام لیتے ہوئے چند لوگوں کو کوفہ کے مختلف قبیلوں کے درمیان بھیجا تاکہ انہیں پہلے ڈرائیں نہیں تو پیسے یا مقام کی لالچ دیں۔ اور بعض قبیلوں کے سردار جو دار الخلافہ کے اندر موجود تھے انہیں دھمکی دے کر دار الامارہ کی چھت پر بھیجا تاکہ ان لوگوں کو جنہوں نے قصر کا محاصرہ کر رکھا ہے کو کسی نہ کسی حربے سے دار الامارہ سے دور کریں۔

اہل کوفہ نے جب اپنے سرداروں کی باتوں کو سنا تو نرم پڑ گئے، شور شرابا دھیرے دھیرے کم ہونے لگا ہر کوئی دوسرے سے کہہ رہا تھا:’’ چلو واپس چلیں، دوسرے لوگ ہیں وہ کافی ہیں‘‘!!۔

آہستہ آہستہ جناب مسلم کے اطراف سے لوگ دور ہوتے گئے یہاں تک کہ صرف ۳۰ افراد مسجد میں ان کے پاس باقی رہ گئے۔ جناب مسلم نے جب اس عہد شکنی کا مشاہدہ کیا تو اسی قلیل تعداد کے ساتھ ’’باب الکندہ‘‘ کی طرف چل پڑے۔ وہاں پہنچنے کے بعد دیکھا کہ صرف ۱۰ افراد ان کے ساتھ ہیں اور جب وہاں سے اور آگے بڑھے تو ان کے ہمراہ کوئی نہ رہ گیا تھا۔

جناب مسلم غربت کے عالم میں، ناآشنا شہر میں تن تنہا، چاروں طرف دیکھ رہے ہیں لیکن کوئی انہیں نظر نہیں آرہا ہے جو انہیں راستہ بتائے یا اپنے گھر میں انہیں پناہ دے۔ سفیر حسین(ع) پریشاں حال میں کوفہ کی گلیوں میں چل رہے ہیں جبکہ انہیں نہیں معلوم کہ کہاں جانا ہے۔

یہاں تک کہ ایک ایسے گھر کے سامنے پہنچے جس کے دروازے پر ایک بوڑھی عورت کھڑی ہوئی تھی۔ اس عورت کا نام طوعہ تھا وہ اپنے بیٹے کی انتظار میں کھڑی تھی جو لوگوں کے ہمراہ گھر سے باہر گیا ہوا تھا۔ جناب مسلم نے اس بڑھیا کو سلام کیا اور اس سے پانی کا مطالبہ کیا۔ طوعہ نے آپ کو پانی دیا اور کاسہ رکھنے گھر کے اندر چلی گئی۔ تھوڑی دیر بعد پھر اپنے بیٹے کو دیکھنے کے غرض سے دروازہ کھولا تو دیکھا کہ وہ شخص مسکینوں کی طرح اس کے دروازے پر بیٹھا ہوا ہے۔ کہا: ’’اے بندہ خدا جب پانی پی لیا تو اب اپنے گھر چلے جاو‘‘۔ جناب مسلم خاموش ہو گئے بڑھیا نے دو تین بار یہی جملہ دھرایا تو جناب مسلم کھڑے ہو گئے اور کہا: ’’میرا اس شہر میں نہ کوئی گھر ہے یا گھرانہ، میں مسلم بن عقیل ہوں، اس قوم نے مجھے دھوکہ دیا اور مجھے اپنے گھروں سے باہر کر دیا ہے‘‘۔ ضعیفہ نے جناب مسلم کو اپنے گھر میں پناہ دی، ان کے لیے الگ کمرے میں فرش لگایا، کھانے کا انتظام کیا۔ لیکن جناب مسلم کھانا تناول کئے بغیر سو گئے اور عالم خواب میں اپنے چچا امیر المومنین علی علیہ السلام کو دیکھا کہ ان سے فرما رہے ہیں:’’ جلدی کرو کہ کل تمہیں ہمارے پاس آنا ہے‘‘۔

دوسری جانب، ابن زیاد نے جب دیکھا کہ اس کا حربہ لوگوں پر کارآمد ثابت ہوا ہے اور لوگوں نے جناب مسلم کا ساتھ چھوڑ دیا ہے تو اپنے قصر سے باہر نکلا اور مسجد میں آکر جناب مسلم کو تلاش کرنے پر ایک ہزار دینار انعام مقرر کیا۔

طوعہ کا بیٹا جب مسجد سے گھر واپس پہنچا تو گھر میں جناب مسلم کے موجود ہونے سے باخبر ہو گیا۔ اس نے علی الصبح انعام کی لالچ میں یہ خبر ابن زیاد تک پہنچا دی۔ عبید اللہ نے درجنوں سپاہیوں پر مشتمل لشکر جناب مسلم کی گرفتاری کے لیے طوعہ کے گھر بھیج دیا۔

جناب مسلم اپنے خدا سے راز و نیاز میں مصروف تھے کہ لشکر نے گھر کا محاصرہ کر لیا۔ گھوڑوں کی ٹاپوں کی آواز سنتے ہی مسلم نے اپنی دعا و مناجات کو تمام کیا اور جلدی سے زرہ پہن کر جنگ کے لیے آمادہ ہو گئے۔ لشکر کے گھر سے قریب ہوتے ہی آپ مقابلہ کے لیے گھر سے باہر آ گئے کہ کبھی ایسا نہ ہو دشمن بڑھیا کا گھر جلا دیں۔

جناب مسلم جو دلیر اور جنگی فنون میں ماہر تھے نے کئی سپاہیوں کو واصل جہنم کر دیا۔ ابن زیاد کا لشکر جب کسی طرح آپ کر قابو نہ پا سکا تو اس نے مل کر جناب مسلم پر حملہ کیا، مکانوں کی چھتوں سے پتھر اور آگ برسائی، آخر کار پیاس کی شدت اور زخموں کی فراوانی اور اس نیزے کی وجہ سے جو پیٹھ پیچھے سے آپ کی پشت پر مارا گیا زمین پر گر گئے اور یزیدیوں نے بڑھ کر آپ کو گرفتار کر لیا۔

جناب مسلم جب گرفتار ہو گئے تو کلمہ استرجاع ’’ انا للہ و انا الیہ راجعون‘‘ زبان پر جاری کرنے کے بعد گریہ کرنے لگے۔ لشکر میں سے ایک شخص نے ان کے رونے پر تعجب کرتے ہوئے اس کا سبب پوچھا، جناب مسلم نے کہا: خدا کی قسم میں اپنے قتل کئے جانے پر گریہ نہیں کر رہا ہوں مجھے موت سے خوف نہیں ہے، میں اہل بیت پیغمبر، حسین اور ان کے بچوں کے لیے گریہ کر رہا ہوں جو یہاں آ رہے ہیں‘‘۔

جناب مسلم کو عبید اللہ کے حکم سے دار الخلافہ کی چھت پر لے جایا گیا اس حال میں کہ جناب مسلم خداوند عالم کی تسبیح پڑھ رہے تھے اور طلب مغفرت کر رہے تھے۔

دار الخلافہ کی چھت پر لے جانے کے بعد جناب مسلم کا سر تن سے جدا کر دیا گیا اور پہلے سر پھر بدن کو دار الامارہ کی چھت سے نیچے گرا دیا گیا تاکہ لوگ ان کا حشر دیکھ کر امام حسین(ع) کی نصرت سے دستبردار ہو جائیں۔ اس کے بعد ان کے بدن کو مجمع عام کے سامنے تختہ دار پر لٹکا دیا گیا۔

ہانی بن عروہ کہ جو ۸۹ سال کے بوڑھے تھے کو بھی کوفہ کے بازار میں لے جا کر دردناک طریقے سے شہید کیا اور تختہ دار پر لٹکا دیا جبکہ وہ اپنے ساتھیوں کو مدد کے لیے بلاتے رہے لیکن کسی نے ان کی مدد نہ کی۔

بعد از آں، ابن زیاد نے جناب مسلم اور ہانی کے سروں کو یزید کے لیے شام بھیج دیا۔ جناب مسلم کا لاشہ بنی ہاشم میں سے وہ پہلا لاشہ تھا جسے تختہ دار پر لٹکایا گیا اور ان کا سر وہ پہلا سر تھا جو شام بھیجا گیا۔

دو محرم سن ۶۱ ھجری امام اپنے اہل و اعیال اور دوست احباب کے مختصر قافلے کے ساتھ کوفہ کے نزدیک ایک پڑاؤ پہنچے اور بھائی حضرت عباس علمدار کو حکم دیا کہ پتہ کریں یہ کونسی سرزمین ہے اور کس کی ملکیت ہے! جب آس پاس کے لوگ بلائے گئے۔ تو کرب و بلا اور نینوا سمیت کئی نام سامنے آئے! تب امام عالی مقام نے حضرت عباس علمدار علیہ سلام سے فرمایا کہ دریائے فرات کے کنارے خیمے نصب فرمائیں. تو پہلی بار کربلاء میں خواہر امام علاج مقام ثانی زہرا کی آواز بلند ہوئی۔۔۔۔ رونے کی۔

صبح عاشوریٰ سے عصر عاشور تک!

صبح جہاد، شام غریباں میں ڈهل گئی.

‏ خیمے. جلے. تو چادر. زہرہ. بھی جل گئی

اہل سنت کے مشہور دانشمند جلال الدین سیوطی نےتاریخ الخلفاءمیں لکھا ہے:”فكتب يزيد إلی واليه بالعراق عبيد الله بن زياد بقتله فوجه إليه جيشاً أربعة آلاف عليهم عمر بن سعد بن أبي وقاص؛ یزید نے کوفہ کے والی ابن زیاد کو حکم دیا کہ حسین بن علی ع کو قتل کردو اس نے عمُربن سعد کے ساتھ چار ہزار کا لشکر امام حسین ع کوقتل کرنے کے لئے روانہ کیا“

اموی خلافت کے گورنر کوفہ ابن زیاد نے سینکڑوں مفتی جمع کیئے اور مفتی اعظم قاضی شریح اور کبار علماء کے ذریعے نواسہ رسول اللہ کو باغی قرار دیکر قتل کا فتوایٰ حاصل کیا۔ اس طرح کبار علماء اور مفتیوں کے فتوے آج بھی دنیا بھر میں حاصل کیئے جاتے رہے ہیں اور بے گناہ لوگوں کو قتل کیا جارہا ہے۔

تاریخ میں لشکر یزید کی تعداد چالیس ہزار تک بتائی جاتی ہے جو امام حسین کے ۷۲ ساتھیوں کے مقابلے میں کربلا میں دو محرم سے عاشوریٰ تک جمع ہوچکی تھی۔

صبح عاشوریٰ کربلاء میں پہلا تیر لشکر یزید کے سپہ سالار عمر سعد ابن سعد بن ابی وقاص نے پھینک کر لشکر یزید کو گواہ بنایا کہ، پہلا تیر میں نے چلایا ہے، اور جنگ کا آغاز ہوا، دن گیارہ بجے سے جھڑپیں شروع ہوئیں۔

لشکر یزید نے تین بار عرب دستور کے برخلاف جنگ ملغوبہ سے آغاز کیا اور پہلے ہی حملے میں امام عالی مقام کے تقریباً پچاس رفقاء باوفا نے شہادت جام نوش فرمایا۔ اب لشکر حسین میں کم و بیش تیس ساتھی رہ گئے۔ اور نماز ظہر کیلئے جب نواسہ رسول اللہ کھڑے ہوئے تو لشکر یزید بھی عمر سعد کی اقتداء میں باجماعت نماز کیلئے کھڑی ہوئی! (خوف آتا ہے اس طرح باجماعت نمازوں سے آج بھی)۔

ظہرِ عاشور تک کربلا کا میدان خون سے. بھرنے لگا، پھر امام حسین باری باری اپنے احباب بھیجتے رہے اور میدان میں کٹ مرنے کے بعد امام عباس اور اکبر سمیت ہاشمی جوانوں کیساتھ جا کر لاشے خیمہ گاہ حسینی لاتے رہے۔ عصر عاشور سے پہلے احباب کے بعد ہاشمی جوان اور رشتہ دار میدان میں بھیجنے شروع ہوئے، کیا بی بی زینب کے دو کم سن بچے عون و محمد لشکر یزید کے ظلم و بربریت کا نشانہ بنے کیسے قاسم کا لاشہ پائے مال ہوا اور کیسے. اکبر کے سینے میں برچھی پھنس کر رہ گئی۔ کیسے عباس کے ہاتھ کٹے اور کیسے حرملہ نے تین کلو بچے کو تیرہ کلو وزنی. تیر سے ذبح کیا، ظلم و بربریت کا طویل داستان ہے جو لشکر یزید کے ان خونخوار درندوں نے خود امیر مختار کے سامنے بیان کیا ہے جب ان سب درندوں کو پکڑ عبرت کا نشانہ بنایا گیا اور کچھ راویوں نے قلمبند کیا ہے۔

ظہر سے عصر عاشور تک جب سب دوست اور رشتہ دار بنی ہاشم ایک کے بعد ایک میدان کربلا میں شہید ہوتے رہے آخر کار امام حسین اکیلے رہ گئے اور جنگ کیلئے تیار ہورہے تھے تو آخری بار خیام حسینی کا دورہ کیا! امام حسین جب خیمہ گاہ پہنچے تو بچوں اور خواتین نے گھیر لیا اور ایک چھوٹی بچی “سکینہ” پاؤں سے لپٹ گئی۔

اب مجھے نہیں پتہ کہ کیسے ایک دوسرے کو تسلی دی ہوگی لیکن بالآخر امام نے جنگ کیلئے سامان مانگا اور تیار ہوئے۔

ذوالجناح پر سوار ہونے کیلئے بہن زینب نے سہار دیا اور میدان میں پہنچ گئے۔

علی کے بیٹے نے تاریخ کی بہترین جنگ لڑی تو لشکر یزید میں چہ مہ گوئیاں شروع ہونے لگی کہ کیسے امام کو روک کر قتل کردیں تو فیصلہ ہوا کہ پوری لشکر قوت کیساتھ ایک ساتھ حملہ کردے۔ وہی ہوا! پوری لشکر یزید نے ایک ساتھ حملہ کیا، تیر برسائے، نیزے برسائے اور کلہاڑیوں اور چھریوں سمیت جو جس تکفیری یزیدی کے ہاتھ میں تھا امام پر ٹوٹ پڑے اور امام زخمی ہوتے گئے بالآخر گھوڑے سے زمین پر آئے اور سجدہ شکر میں گر پڑے۔

یہی سجدہ شبیری ہے جو تاریخ میں یاد کیا رکھا جائے گا اور جس خاک پر سجدہ کیا اس خاک شفا کو آج بھی مسلمان نماز پڑھتے وقت اپنی پیشانی کے نیچے رکھنے کو ترجیح دیتے ہیں۔

‏یزیدی فوج کے سپاہی شمر سے کہ رہے تھے. ‏کہ‏ جلدی حسین سر تن سے جدا کرلیں نماز عصر قضا ہو رہی ہے۔

اب شبیر سجدے میں ہیں اور لشکر یزید کے خونخوار درندہ شمر لاشہ مظلوم پر پہنچ چکے ہیں۔ اب جیسے ہی بھائی آنکھوں سے اوجھل ہوا ادھر پہلی بار علی کی بیٹی اور ثانی زہرا س خیمہ گاہ حسینی سے باہر نکلیں اور ایک ایسی جگہ (تلے زینبیہ) پہنچی جہاں سے بھائی کا لاشہ دیکھ سکتی تھیں۔ اب بہن تلے زینبیہ پر کھڑی ہوکر یزیدی لشکر کے سپہ سالار شمر کو دیکھ رہی تھیں کہ شمر لاشہ امام کے اوپر. بیٹھ کر امام کو پس پشت ذبح کرنے کی کوشش کررہے تھے۔

شمر ابن ذی لجوشن نے کند خنجر کے وار کر، کرکے امام کو پشت گردن سے ذبح کرکے نواسہ رسول کا سر تن سے جدا کردیا اس وقت لشکر یزید تکبیر، اللہ اکبر کے نعرے لگاتے رہے۔ انا للّٰہ وانا الیہ راجعون۔

ذبح کرنے اور سر تن سے جدا کرنے کا تکفیری اور یزیدی رسم آج بھی اسی طرح جاری و ساری ہے۔

‏یزیدی فوج کے سپاہی شمر سے کہ رہے تھے. ‏کہ‏ جلدی حسین سر تن سے جدا کرلیں نماز عصر قضا ہو رہی ہے۔

ظلم ابھی ختم نہیں ہوا! اس کے بعد لشکر. یزیدی کے جرنیل عمر سعد نے حکم دیا کہ سب گھوڑوں کی نعلیں تازہ کر دی جائیں اور لاشوں کو پائے مال کیا جائے، کلمہ گو مسلمانوں نے نواسہ رسول اللہ اور ساتھیوں کے لاشوں کو گھوڑوں تلے روندا۔

عصر عاشور جب میدان کربلا میں جنگ ختم ہوئی اور لشکر یزید نے نواسہ رسول اور اہل بیت کے جوان اور ان کے ساتھیوں کو شہید کردیا تو کربلا میں سجی حسینی بستی پر ٹوٹ پڑے۔ خیام حسینی میں یزیدی لٹیروں نے لوٹ مار کی اور خیموں کو آگ لگا دی گئی۔ اہل بیت کے چھوٹے چھوٹے بچوں اور خواتین کو ہراساں کیا جس میں کئی بچے گھوڑوں کے ٹاپوں سے شہید ہوئے۔ اور روایات میں ہے کہ لشکر کے جرنیل امام حسین کی تین سال کی بچی سکینہ کو طمانچے دیتے رہے اور لوٹ مار کرتے ہوئے سکینہ کی بالیاں اسطرح کھینچ لیں کہ کان لہو لہان ہوئے۔

ایک روایت کے مطابق کربلا میں مقتل اور شام غریباں کے بعد جب امام حسین کی بہن نے بچوں اور خواتین کو جمع اور گنا تو انکی تعداد بہت کم تھی لیکن ایک واضح کمی امام حسین کی چھوٹی بچی سکینہ کی نوٹ کی گئی جس کی وجہ سے زینب کافی پریشان ہوئی اور ادھر اُدھر ڈھونڈنے کے بعد بھی جب نہیں ملی تو بی بی زینب نے لاشہ امام عالی مقام پر جا کر دیکھنے کا فیصلہ کیا۔ اب مجھے نہیں پتہ کہ بی بی زینب نے لاشہ امام پر جانے کا فیصلہ کیسے کیا ہوگا جبکہ عصر عاشور بی بی زینب تلے زینبیہ پر کھڑی ہوکر یزیدی لشکر کے سپہ سالار شمر کو لاشہ امام کے اوپر. بیٹھ کر دیکھ چکی تھیں جب وہ کند خنجر کے وار کر، کرکے امام کو پشت گردن سے ذبح کررہے تھے اور لاشہ نواسہ رسول پر تیروں اور تلواروں کی بارش کے علاوہ گھوڑے بھی دوڑائے گئے تھے جس کی وجہ سے جسم میں کوئی جگہ باقی نہیں بچی تھی اور راویات میں آیا ہے کہ بی بی سکینہ بابا کے سینے پر سو رہی تھی۔ ھیئھات من الذلہ ( میرے آنسووں نہیں روک رہے یہ جملے لکھنے ہوئے، نہ جانے آپ کو پڑھ کر کیا محسوس ہو رہا ہوگا)۔ خیر، بی بی زینب سکینہ، سکینہ پکارتی لاشہ امام قریب پہنچی تو سکینہ کو امام کے لاشہ پر پایا اور بہت مشکل سے واپس ایک جلے ہوئے خیمے میں لے آئے جہاں امام زین العابدین ع سمیت خواتین اور بچے ہوئے بچے جمع کیئے گئے تھے۔ اب کئی دن بعد ایک خاتون پانی لیکر آئی تھیں تو حسب دستور بی بی زینب نے سکینہ کو جام تھما دیا کہ پانی پی لیں، سکینہ نے فرمایا کہ آپ مجھ سے زیادہ پیاسی ہیں آپ پی لیں! بی بی زینب نے فرمایا کہ آپ چھوٹی ہیں اسلئے حق ہے کہ آپ پہلے پانی پیئں۔ اب سکینہ نے جام ہاتھوں میں لیا اور مقتل کی طرف دوڑ پڑیں کہ پھوپھی اگر پانی پہلے چھوٹے بچوں کا حق ہے تو میرا بھائی علی اصغر۔۔۔ مجھ سے بھی چھوٹا ہے۔ سلام ہو اہلبیت رسول ص پر۔

الا لعنۃ اللہ علی القوم الظالمین و سیعلم الذین ظلموا ای منقلب ینقلبون۔

#احمدطوری

ریفرنسز

ابن کثیر: بدایہ والنہایہ جلد ہشتم ص ۴۰۱

تاریخ الیعقوبی ج ۲ ص ۲۸۸

الکامل: ج ۳ ص ۳۵۱، ۳۸۷

سید بن طاووس، اللھوف فی قتلی الطفوف

شیخ عباس قمی، نفس المھموم

شیعہ اور جابر حکمران۔ علامہ جواد مغنیہ

تاریخ عاشوی۔ ڈاکٹر ابراھیم آیتی

شجرۂ ملعونہ: سید آل نقی

خلافت و ملوکیت: مولانا مودودی

حدیث کربلاء علامہ طالب جوہری

Historical artefacts associated with Shia Islam found in the British Museum, London. by @hazthesaz

 Historical artefacts associated with Shia Islam found in the British Museum, London 

Seal from Iran with the inscription of ‘Naad e Aliyyan Mazharul Ajaib’

Shield from India’s Mughal Empire which sends invocations upon Allah, Prophet Muhammad, and Imam Ali

This tile from Safavid Dynasty is decorated with Ayatul Kursi and names of the 12 imams

This bowl was produced in China 300 years ago. Surrounding the centre square it says ‘La Fata Ila Ali La Sayf Ila Zulfiqar’.

This goldsmiths box from late Safavid period has decorations including Imam Hasan and Imam Husain surrounded by angels.

They also had turbahs! These are 200 years old from Najaf and Karbala

In Urdu and Farsi this is called an alam, used in processions commemorating Ashura. This is from the Qajar dynasty.


This cap from Turkey has the message


‘Oh Ali one of the favourites of God, Oh the vanquisher of enemies! Oh Guardian of the friends of God!’

This inscription from a ruler of Fatimid Dynasty praises Allah, the Prophet and Imam Ali

This was incredible! This ‘haft rang’ bowl shows an illustration of mourners doing latom/matam in commemoration of Ashura.

The coinage from the Fatimid Dynasty included names of the Ahlulbayt.

Artefacts from the city of Samarra, a city home to the shrines of two of our Imams.

This massive alam from Awadh, Northern India includes the names of Ahlulbayt, Ayatul Kursi and various surahs of Quran and ziyarats.

This alam, also from Awadh in Northern India, depicts the scene where the arms of Hazrat Abbas were severed when getting water.

• • •