بلاگر بلال خان قتل کیس: ایجنسیوں سے پی ٹی ایم اور اب سید عابد علی شاہ تک۔ احمدطوری 

بلاگر بلال خان قتل کیس: ایجنسیوں سے پی ٹی ایم اور اب سید عابد علی شاہ تک۔ احمدطوری 

دو سال پہلے اسلام آباد کے نواہ بارہ کہو کے قریب میں نوجوان مذہبی بلاگر بلال خان قتل کردیئے گئے تھے، محمد بلال خان پر وفاقی دارالحکومت کے علاقے جینائن فور میں چاقو یا خنجر سے حملہ کیا گیا تھا جس میں بلاگر جاں بحق جبکہ اس کا دوست احتشام زخمی ہوگیا تھا۔ 

پولیس حکام کے مطابق واقعہ اسلام آباد کے علاقے جی نائن فور میں پیش آیا جہاں نامعلوم افراد نے بلال خان کو فون کر کے بلایا اور تیز دھار آلے کے کئی وارکر کے قتل کر دیا۔ واقعےمیں ایک شخص زخمی بھی ہوا جسے اسلام آباد کے پمز ہسپتال میں داخل کیا گیا ہے۔

بلال خان قتل کیس میں سب سے پہلے تو پاکستان آرمی اور ایجنسیوں کے نام سامنے آئے جہاں کچھ عرصہ سے بلال خان فوج پر تنقید کُرتے رہے اور عمرانخان حکومت پر بھی کڑی تنقید کرتے رہے، انڈین میڈیا اور پاکستان میں ایک طبقے نے اس خبر کو بہت اچھالا اور فوج کے کھاتے میں ڈال دیا تو ایک ہفتے بعدڈی جی آئی ایس پی آر نے قتل کی مذمت کرتے ہوئے لاتعلقی کا اظہار کیا۔

https://www.ndtv.com › pakista…Pakistani Blogger And Activist, Known For Criticism Of Army, Killed

مقتول بلاگر محمد بلال خان اسلامک یونیورسٹی (آئی آئی یو آئی) میں شریعہ فکیلٹی کا طالبعلم تھا۔ اس وقت معاملہ پی ٹی ایم کے کھاتے میں ڈالنے کی کوشش کی گئیتھی، روزنامہ اوصاف کے نام سے فیک نیوز چلائی گئی کہ بلال خان کو پی ٹی ایم سے تعلق رکھنے والے لڑکی کے بھائی نے قتل کیا ہے۔ متعلقہ قومی اخبار نے خبرکی تردید کرتے ہوئے اسے ادارے کے خلاف پراپیگنڈا قرار دیا ہے۔ جبکہ سوشل میڈیا پر وائرل خبر میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ بلال خان کا بی بی شیریں نام کی لڑکیسے معاشقہ تھا لیکن لڑکی والے اپنی بیٹی کا رشتہ مقتول کو نہیں دینا چاہتے تھے۔ گھر والوں کے منع کرنے کے باوجود بلال خان باز نہ آیا تو لڑکی کے بھائی عثماننے جو کہ پی ٹی ایم کا سرگرم کارکن ہے قتل کی رات بلال خان کو فون کرکے ملنے کیلئے بلایا اور چھریوں کے پے در پے وار کرکے قتل کردیا۔

خاندانی ذرائع کے مطابق بلال خان ایک روز قبل ہی عید کی چھٹیاں گزار کر ایبٹ آباد سے واپس اسلام آباد کے علاقے بہارہ کہو میں اپنے رشتہ داروں کے پاسپہنچے۔

گذشتہ رات مبینہ طور پر عثمان نامی شخص نے انہیں کال کر کے جی نائن فور میں بلایا۔ بلال خان کے زخمی ساتھی احتشام الحق کے ابتدائی بیان کے مطابقجب وہ جی نائن فور میں بتائے گئے مقام کی طرف جا رہے تھے تو گلی کے نکڑ پر جھاڑیوں میں گھات لگائے چار سے پانچ افراد نے ان پر حملہ کر دیا، جس میںبلال وہیں ہلاک ہوگئے۔ پولیس کے مطابق، ان پر 17 بار وار کیے گئے۔ جبکہ بلال خان کے بھائی نے یوٹیوب ویڈیو کے ذریعے بلال خان کی اصل حقیقت بتائیاور  محمد بلال خان شہیدؒ کا قتل کیسے ہوا،  انکشافات کئے۔

بلال خان کو کس نے قتل کیا تھا؟

https://bit.ly/3kotojY

نوجوان بلاگر کا قتل: بلال پر تیز دھار آلے سے 17 بار وار کیا گیا، پولیس 

اسلام آباد میں بلاگر بلال خان کے قتل کا مقدمہ درج 

https://bit.ly/3ks3tI7

ایس ایس پی اسلام آباد ملک نعیم اقبال نے انڈیپنڈنٹ اردو کو بتایا کہ ’بظاہر یہ ذاتی رنجش کا معاملہ ہے۔ تاہم اس کے محرکات میں بلال خان کی سوشل میڈیا پرسرگرمیوں سمیت مختلف عوامل شامل ہو سکتے ہیں۔ پولیس ہر پہلو سے تفتیش کر رہی ہے اور جلد کسی نتیجے پر پہنچنے کا امکان ہے۔‘

حکام کو شک ہے کہ حملہ آور بلال کے جاننے والوں میں سے کوئی تھا کیونکہ وہ رات گئے اس طرح کسی اپنے کے ہی کہنے پر گھر سے نکل سکتا تھا۔ ان کے بچجانے والے ساتھی نے سکیورٹی حکام کو بتایا کہ وہ حملہ آوروں کو نہیں جانتے لیکن ان میں سے ایک کو اگر دوبارہ دیکھیں تو پہچنے کا امکان ہے۔ 

ملک نعیم اقبال نے مزید کہا کہ ’عموماً اس طرح کے معاملات میں ذاتی رنجش کا عمل دخل ہوتا ہے اور اس کی کئی وجوہات ہو سکتی ہیں۔ چونکہ بلال احمد مذہبیمعاملات پر تبصروں کی وجہ سے سوشل میڈیا پر کافی سرگرم تھے تو عین ممکن ہے کہ اس کے قتل کی وجہ مذہبی یا مسلکی رنجش ہو۔ تاہم اس مرحلے پر حتمی نتیجہاخذ کرنا قبل از وقت ہو گا۔‘

اب 

وفاقی وزیر داخلہ شیخ رشید نے وفاقی دارالحکومت میں پریس کانفرنس کے دوران کہا کہ جون 2019 میں قتل ہونے والے بلاگر بلال خان کے کیسمیں پیش رفت ہوئی ہے اور پولیس نے بلال خان کے قاتل کو گرفتار کرلیا ہے۔ 

شیخ رشید نے بڑی وضاحت کے ساتھ بتایا کہ بلال خان کے قتل پر بعض طبقوں نے اس واقعے کی ذمہ داری خفیہ ایجنسیوں پر عائد کی تھی لیکن قتل کی اصلوجہ اس کے مذہبی عقائد تھے۔

اصل حقیقت کیا ہے؟؟؟

اصل حقیقت یہ ہے کہ اسلام آباد پولیس اور وزیرِداخلہ شیخ رشید دونوں جھوٹ بول رہے ہیں اور اور یہ جھوٹ عدلات میں ثابت ہوکر رہے گا۔ کیونکہ جسبندے کا نام وہ لے رہے ہیں وہ بندہ تین، چار ماہ پہلے اسلام آباد سے اغوا کرکے لاپتہ کردیئے گئے تھے اور بلال خان کے قتل کیس میں نام ڈال کر ظاہر کردیئےگئے ہیں۔ کراچی پولیس بھی اسی طرح واردات کرتے رہے ہیں اور لاپتہ افراد کو کسی بھی قتل کیس میں ملوث کرکے نام ڈال دیتے ہیں جو بعد میں باعزت بریہوجاتے ہیں۔ 400 ایسے کیس تو صرف نقیب اللہ محسود قتل کیس کے بعد سامنے آئے تھے جو ایک ایس پی قتل کرچکے تھے، اب وقت آگیا ہے کہ پولیس اوروزارت داخلہ اور سب محکموں کے ایسے ہتھکنڈے استعمال کرنے سے روکا جائے۔

ایک اور شیعہ عزادار عابد علی شاہ  لاپتہ … – شیعہ نیوز

سید عابد علی شاہ کو دو تین مال پہلے نامعلوم افراد اسلام آباد سے اغوا کرکے لاپتہ کردیئے گئے تھے، وہ اپنی پانچ سالہ بھتیجی علاج کے لئے اسلام آباد لے گئے تھے،اسپتال پہنچتے  ہی نا معلوم افراد نے اسے آغوا کر کیا۔

مریضہ چھوٹی بچی کا کہنا تھا کہ مسلح افراد میرے انکل کو زبردستی لے کر گئے اور ہسپتال میں مجھے اکیلا چھوڑ دیا، اور پھر پولیس کے ایک انسپکٹر چھوٹے بچی کواپنے ساتھ پولیس سٹیشن لیے کر گئے، جہاں پانچ سالہ چھوٹی بچی بغیر ماں باپ  کے پولیس سٹیشن میں رات بھر روتے رہی اور اس حوف ناک حادثے کی وجہسے اس چھوٹی بچی کی دماغی حالت اب ٹھیک نہیں ہے۔

عابد علی شاہ کے لئے پاراچنار سمیت اسلام آباد اور پشاور میں مظاہرے ہوئے تھے مگر لاپتہ عابد علی شاہ کے متلعق کوئی خبر شئیر نہیں کی گئی تھی۔ اور اسواقعے کی ایف آئی آر بھی درج کی کی گئی تھی۔ 

سید عابد علی شاہ کے چچا نے بتایا کہ ایف ہفتہ پہلے سی ٹی ڈی نے انہیں کال کرکے بتایا کہ سید عابد علی شاہ ہمارے پاس ہے ایک ہفتہ پہلے ضلع کرم سے گرفتارکرکے اسلام آباد لائے ہیں۔ اور اس کا انٹی ٹیرارزم کورٹ میں کیس چل رہا ہے۔ سید عابد چچا نے پولیس کو واضح بتایا کہ سید عابد تو اسلام آباد سے دو تین ماہپہلے لاپتہ ہوئے تھے اور اس کا ایف آئی آر بھی درج ہے؟ تو پولیس کے پاس کوئی مناسب جواب نہیں تھا، اب معاملہ کورٹ میں ہے۔ اور 23 ستمبر کو بھی انٹی ٹرارزم کورٹ اسلام اباد میں پیشی ہے

FIR of Abid Ali Shah registered in Islamabad

https://dailypakistan.com.pk/31-Jul-2021/1322184

…جوائنٹ ایکشن فار شیعہ مسنگ پرسنز کا لاپتہ افراد کی رہائی …

شیخ رشید کو ضلع کرم اور گلگت بلتستان کے نوجوانوں سے خاص محبت ہے جو راولپنڈی میں تکفری مسجد پر چہلم کے دن حملے میں بھی نام لیتے رہے جبکہ پاکفوج کے سابق ترجمان آصف غفور صاحب کے  مطابق راولپنڈی میں چہلم کے جلوس پر حملے کی سازش میں کالعدم دیوبندی تنظیم ملوث پائی گئی تھی۔  

یجر جنرل آصف غفور نے انکشاف کیا ہے کہ نومبہر 2013 کو راولپنڈی راجہ بازار میں مسجد و مدرسہ تعلیم القرآن پر حملے و آتشزدگی  میں ٹی ٹی پی کے دہشت گرد ملوث تھے پ

اور کچھ دن پہلے اسلام آباد میں مولانا شہنشاہ نقوی پر پابندی کے خلاف احتجاج میں بھی پارچنار اور گلگت کے نوجوانوں کی طرف اشارہ کررہے تھے۔ جبکہ شیخرشید خود سپاہ صحابہ اور والجماعت جیسے کالعدم اور دہشتگرد تنظیموں کے پاکستان دفاع کونسل کے ممبر رہے ہیں اور اب بھی وہ پلیٹ فارم موجود ہے۔

واضح رہے کہ پورے ملک سے کئی درجن شیعہ افراد لاپتہ ہیں اور انہیں سادہ لباس مسلح افراد ان کے گھروں اور راستوں سے اٹھا کر لاپتہ کردیتے ہیں اور اسکے بعد ان کے اہل خانہ کو ان کی کوئی خبر نہیں ہوتی