عمران خان کو مسلح جھتہ (ملیٹنٹ ونگ) بنانے کی تجویز! 

صحافی ڈاکٹر معید پیرزادہ کے مطابق عمران خان نے پشاور میں اپنے پسندیدہ صحافیوں، اینکرز اور یوٹیوبرز سے ملاقات  کی جس میں ایک سے زیادہ “لوگوں” نے عمران خان کو پاکستان تحرک انصاف کے جلسوں کی تحفظ کے لئے ملیٹنٹ ونگ(مسلح جھتہبنانے کی تجویز دی، جو سٹیٹ مشینری (پولیس، ایف سی “وغیرہ”) کا مقابلہ کریں۔

مگر عمران خان صحافیوں کے مشورے  سے اتفاق نہیں کیا۔ عمران خان نے مزید فرمایا کہ اگر ہم ملٹری ونگ کھڑے کرتے ہیں تووہ پارٹی پر قبضہ کریں گے (چھبیس سال سے عمران خان قابض ہیں ویسے)۔ عمران خان نے بات آگے بڑھاتے ہوئے کہا کہ یہآپشن کراچی میں پہلے بھی زیر بحث رہی مگر ہم نے ان سے اتفاق نہیں کیا۔۔

اب دیکھنا یئ ہے کہ عمران خان کو مسلح جھتہ (ملیٹنٹ ونگبنانے کی تجویز کس نے دی؟

عمران خان کے پیروکاروں سے اس قسم کی توقع کی جاسکتی ہے اور ہو سکتا ہے عمران خان بھی مستقبل میں اس پرسوچیں، مگر میرا خیال ہے کہ عمران خان کو مسلح ونگ کی بالکل ضرورت نہیں، طالبان پی ٹی آئی کا بنا بنایا ونگ ہوسکتاہے، ماضی میں طالبان عمران خان کی بھرپور حمایت کرچکے ہیں اور پاکستان سے مذاکرات میں سمیع الحق کے ساتھ اپنانمائیندہ بھی منتخب کرچکے ہیں۔

مگر آج 30 مئی کو پشاور میں وکلاء کنونش سے خطاب میں سارا منظرنامہ بدل گیا ہے۔ صوبہ پختونخواہ کی وزیراعلیمحمود خان نے  وزیراعظم شہباز شریف، رانا ثناءاللہ کے بارے میں گالم گلوچ کے بعد اسلام آباد پر صوبائی فورسز کے ساتھلشکر کشی کی دھمکی دے، جو آئین سے بغاوت ہے۔ لنک 

محمود خان کا عمران خان کی آئندہ کال پر کے پی کی فورس استعمال کرنے کی دھمکی

اور عمران خان نے چھبیس سال سے رٹی رٹائی تقریر کے شریف برادران کے خلاف غلیظ زبان استعمال کی اور محمود خان کیبات کو آگے بڑھاتے ہوئے “مکمل تیاری” کے ساتھ مارچ کرنے کا اعلان کیا، اور اس مارچ کے لئے خان صاحب سپریم کورٹ بھیجارہے ہیں جہاں پکڑ دھکرڑ اور راستے بند کرنے کے بارے میں گارنٹی چاہتے ہیں۔

لنک 

پرامن احتجاج کے تحفظ کیلئے سپریم کورٹ رولنگ دے، ورنہ ہم تیاری سے جائینگے، عمران خان

آنیوالے وقتوں میں اس خبر کی گونج سنی جائے گی کیونکہ طالبان کو مین سٹریم کی تیاری کے لئے مذاکرات بھی آخریمراحل میں ہیں اور اگلے ہفتے مفتی تقی عثمانی کی قیادت  میں ایک اعلی سطحی وفد پاکستان تحریک طالبان سے مذاکراتکے لئے کابل کا دورہ کررہے ہیں جس میں اہم پیش رفت کی توقع کی جارہی ہے۔

دہشتگرد تنظیم سپاہ صحابہ اور لشکر جھنگوی کو مین سٹریم کیا جا چکا ہے اور کالعدم تنظیموں کے ہزاروں کارکنانپولیس اور قانون نافذ کرنے والے اداروں میں ضم کئے جاچکے ہیں جو پاکستان کے کونے کونے میں مخالفین کے اغوا، جبریگمشدگی اور ٹارگٹ کلنگ میں ملوث رہے ہیں۔

اس موضوع پر اس وقت سے لکھنا بند کیا ہے جب سے ملک کے مقتدر اداروں نے دینی مدارس کے طلباء ملٹری اکیڈمی کاکولبھیجنے کا سلسلہ شروع کیا اور اب پاک فوج میں ایسے “طالبان افسران” سامنے آئیں گے جو ملٹری اکیڈمی کاکول کے تربیتیافتہ ہوں گے۔

یاد رہے!! پرویز مشرف اور جی ایچ کیو سمیت پاکستان پر بڑے حملوں میں پاک فوج کے تربیت طالبان ہی ملوث پائے گئے ہیں،لہذا اب آستین کے سانپوں میں اضافے کیا گیا ہے۔

جن خدشات کا اظہار کیا ہے  یہ مستقبل قریب میں تو مشکل ہیں مگر پچھلے کالعدم تنظیموں کو جس طرح  مین سٹریم کیاگیا اور یکساں نظام تعلیم میں سپاہ صحابہ کے وفود (خاص کر پنجاب  میں معاویہ اعظم طارق اور صوبہ پختونخواہ میںسپاہ صحابہ کے اہلکارمکمل طور پر آن بورڈ تھے۔ 

مسقبل بعید میں پاکستان کو مکمل طور پر دیوبندی اسٹیٹ بنانے کا پلان ہے جس پر کافی عرصہ سے کام جاری ہے۔ 

یاد رہے جامعہ المنتظر کے علماء سمیت کئی اور علماء بھی “پرو دیوبندی” یکساں نصاب تعلیم پر متفق ہوگئے تھے مگر بعدایم ڈبلیو ایم سمیت میں علامہ شہنشاہ نقوی نے احتجاج کیا ہے اور شہباز شریف سرکار نے آتے ہوئے اسے سسپنڈ کیا مگراپنا فیصلہ بعد میں واپس لیا۔

#احمدطوری

ڈاکٹر معید پیرزادہ کا مکمل وی لاگ نیچھے دیئے گئے لنک پر سنیں۔

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s